Posts

Featured post

Main lafz lafz ehsaas likhoon In lafzon ko tera naam likhoon

Image
Main lafz lafz ehsaas likhoon In lafzon ko tera naam likhoon Kabhi tujh ko apni subah likhoon Kabhi ek haseen shaam likhoon Kabhi purnam sa ehsaas likhoon Kabhi dilkhash si muskaan likhoon I write words of feelings. Write your name to these words Sometimes I will write you my morning Should I write a beautiful evening sometime Sometimes write a full moon feeling. Should I write a beautiful smile sometime

Hum Ko Thi "Gham" Se Kabhi Aaghii Kahan Tere Baghair Zindagi Hai Zindagi Kahan

Image
Hum Ko Thi "Gham" Se Kabhi Aaghii Kahan Tere Baghair Zindagi Hai Zindagi Kahan  

Takra Gaya Wo Mujh Se Kitaben Liye Hoe Phir Mera Dil Aur Us Ki Kitaben Bikhar Gain

Image

Sir Tey Topi Dhar Chaden Tey Hath Wich Pad Musalla Seenay Andar Pathar Tere Munah Tey ALLAH ALLAH

Image
Sir Tey Topi Dhar Chaden Tey Hath Wich Pad Musalla Seenay Andar Pathar Tere Munah Tey ALLAH ALLAH Ahmad Shakeel Choataai

Aap Ko Chehre Se Bhi Bemaar Hona Chahiye Ishq Hai Tou Ishq Ka Izhaar Hona Chahiye

Image
آپ کو چہرے سے بھی بیمار ہونا چاہئے عشق ہے تو عشق کا اظہار ہونا چاہئے آپ دریا ہیں تو پھر اس وقت ہم خطرے میں ہیں آپ کشتی ہیں تو ہم کو پار ہونا چاہئے ایرے غیرے لوگ بھی پڑھنے لگے ہیں ان دنوں آپ کو عورت نہیں اخبار ہونا چاہئے زندگی تو کب تلک در در پھرائے گی ہمیں ٹوٹا پھوٹا ہی سہی گھر بار ہونا چاہئے اپنی یادوں سے کہو اک دن کی چھٹی دے مجھے عشق کے حصے میں بھی اتوار ہونا چاہئے منور رانا

Kis ko ye fikar hai keh qabeelay ko kiya hova sab is pe larr rahay hain keh sardar kon hai

Image
کس کو یہ فکر ہے  کہ  قبیلے کو کیا ہوا سب اس پہ لڑ رہے ہیں کہ سردار کون ہے Kis ko ye fikar hai keh qabeelay ko kiya hova  sab is pe larr rahay hain  keh sardar kon hai namaloom

Chupkey Se Jaise Koi Muqaddar Mein Aa Gaya Dastak Diye Baghair Mere Ghar Mein Aa Gaya

Image
  چپکے سے جیسے کوئی مقدّر میں آ گیا دستک دئیے بغیر میرے گھر میں آ گیاَ دیکھا جمالِ یار تو مبہوت ہو گیٔے گویا وہی تصویر کے پیکر میں آ گیا ساقی نے دل ملا دیا شاید شراب میں اک قطرہ خون کا میرے ساغر میں آ گیا زنجیریں توڑ دی ہیں سبھی بے بسی کی آج سودا جنونِ عشق کا اب سر میں آ گیا ارشد مِلا سکون دلِ بیقرار کو جب بھی خیالِ دوست دلِ مضطر میں آ گیا مرزا ارشد علی بیگ آڈبان ، پینسلوانیا نومبر ٣٠، ٢٠٢